روس نے پاکستان کے ہمسایہ ملک کی سرحد کا کنٹرول ہاتھ میں لینے کی تیاری شروع کر دی

ماسکو (مانیٹرنگ ڈیسک)شام میں روسی فوج کی مداخلت پرامریکہ و دیگر مغربی ممالک پریشان تھے کہ روس نے ایک اور اعلان کرکےHamwatan ایک نئی پریشانی کھڑی کر دی ہے۔روس نے افغانستان سے غیرملکی افواج کے انخلاء کے بعد شدت پسند عناصر کی کارروائیاں بڑھنے کے خدشے کے پیش نظر تاجکستان افغان بارڈر پر اپنی فوجیں تعینات کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔یہ اعلان گزشتہ روزسینئر روسی دفاعی حکام کی طرف سے سامنے آیا ہے۔ حکام کی طرف سے کہا گیا ہے کہ طالبان افغان صوبے قندوز میں پیش قدمی کا آغاز کر چکے ہیں جو تاجکستان کے ساتھ ملحقہ صوبہ ہے۔ دوسری طرف شام میں برسرپیکار شدت پسند تنظیم کے اس خطے میں قدم جمانے کی اطلاعات بھی آ رہی ہیں اس لیے روس نے تاجک افغان بارڈر کی سکیورٹی سخت کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

افغانستان میں تعینات روسی سفیر آندرے آویتیان نے بھی روسی دفاعی حکام کے اعلان کی توثیق کی ہے اور اپنے انٹرویو میں کہا کہ ہم افغانستان سے فوجی انخلاء کے بعد درپیش سکیورٹی خطرات سے نمٹنے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس کے لیے ہم افغان تاجک بارڈر پر اپنی سنجیدہ موجودگی چاہتے ہیں کیونکہ اس اقدام سے دونوں ممالک کے لیے سکیورٹی صورتحال میں مزید بہتری آئے گی۔ انہوں نے کہا کہ یہ اقدام روس ‘ تاجکستان اور افغانستان تینوں ممالک کے مفاد میں ہوگا۔قازقستان کے صدر نورسلطان نذربایوو نے بھی روسی ہم منصب ولادی میر پیوٹن سے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے تاجکستا ن میں سکیورٹی صورتحال پر شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

Pin It

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <strike> <strong>