کسٹمز انٹیلی جنس نے 1.43 کروڑ کا اسمگل شدہ سامان پکڑ لیا

2 کراچی: ڈائریکٹوریٹ جنرل آف انٹیلی جنس اینڈ انویسٹی گیشن (اے ایس او) نے انسداد اسمگلنگ مہم کے کامیاب آپریشن کرتے ہوئے کراچی میں واقع مختلف گوداموں میں چھپایا گیا 1 کروڑ 43 لاکھ روپے سے زائد مالیت کا غیرملکی سامان قبضے میں لے لیا، کسٹم انٹیلی جنس کو یہ اطلاعات موصول ہوئی تھیں کہ بھاری مقدار میں غیرملکی سامان ڈیوٹی اور ٹیکس کی ادائیگی کے بغیر ناجائز طریقے سے لاکر مختلف گوداموں میں چھپایا گیا ہے۔
اس اطلاع پر کارروائی کرتے ہوئے اینٹی اسمگلنگ اسکواڈ نے سٹی اسٹیشن پر چھاپے کے دوران سپرشیخ گودام سے اعلیٰ کوالٹی کا غیرملکی کپڑاقبضے میں لے لیا جو ایک مقام پر چھپا کر رکھا گیا تھا جس کی مالیت40 لاکھ روپے سے زائد ہے، ایک اور کارروائی کے دوران اینٹی اسمگلنگ کے عملے نے شیر شاہ میں واقع سائٹ کے علاقے پلاٹ نمبرD-267 سے 465 ڈرم ضبط کر لیے جس میں غیرملکی موٹر آئل، ربر پروسیسنگ آئل اور گریس وغیرہ موجود تھا۔
ضبط کیے جانے والے اس سامان کی مارکیٹ میں مالیت تقریباً 1 کروڑ 3 لاکھ روپے سے زائد ہے ۔ ڈائریکٹر کسٹم انٹیلی جنس محمد آصف مرغوب صدیقی نے مندرجہ بالا سامان ضبط کرنے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ سامان کی مارکیٹ میں مجموعی مالیت 1کروڑ 43 لاکھ روپے سے زائد ہے، اس سلسلے میں قانونی کارروائی کسٹم ایکٹ 1969 کے تحت عمل میں لائی جا رہی ہے، کامیاب آپریشن کرنے والی اس کسٹم انٹیلی جنس اینٹی اسمگلنگ ٹیم میں اسسٹنٹ ڈائریکٹر کلیم اﷲ کی سربراہی میں حاجی محمد اسلم اور دیگر افسران اکمل ہاشمی، سیف ہاشمی، قاسم علوی، معراج علوی، منور علی، عاطف شجاع اور پرویز زرداری شامل تھے۔
ڈائریکٹر کسٹم انٹیلی جنس نے بتایا کہ اسمگلنگ کے خلاف ناجائز طریقے سے ڈیوٹی اور ٹیکس کی ادائیگی کے بغیر گوداموں میں رکھے ہوئے سامان کے خلاف کارروائی بھرپور طریقے سے جاری رہے گی اور اس سلسلے میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کی ضرورت پڑنے پر مدد بھی لی جائے گی تاکہ فیڈرل بورڈ آف ریونیو کی انسداد اسمگلنگ حکمت عملی اور ڈائریکٹر جنرل کسٹم انٹیلی جنس لطف اﷲ ورک کی ہدایت پر موثر طریقے سے عمل درآمد کیا جاسکے۔
انھوں نے بتایا کہ گزشتہ ہفتے ماڑی پور میں گودام سے بھی 15ٹن غیرملکی اسمگل شدہ سفید زیرہ ضبط کیا گیا تھا، پریونٹیو کلکٹوریٹ کے اسسٹنٹ کلکٹر رضا نقوی کی سربراہی میں کی گئی ایک اور کارروائی کے دوران 65 ہزار لیٹر ایرانی ڈیزل ضبط کیا گیا اور کئی پٹرول پمپ مسمار بھی کیے گئے، اس سلسلے میں کسٹم انٹیلی جنس (اے ایس او) کا تعاون شامل رہا جو اینٹی اسمگلنگ کی پالیسی کے عین مطابق ہے، کسٹم انٹیلیجنس کے افسران اور عملے کو اس سلسلے میں مزید چوکس رہنے کی ہدایت کی گئی ہے تاکہ اسمگلنگ کی لعنت پر قابو پایا جاسکے اور ملکی خزانے کو ہونے والے بھاری نقصان سے بچایا جاسکے۔

Pin It

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *